پاکستان تحریک انصاف کے 25 سال: سٹریٹ پالیٹکس سے پارلیمنٹ تک | Pakistan Tehreek-e-Insaf
The 25 Years of PTI - From Street Politics to Parliament

 

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی)  انصاف کے لئے ایک سیاسی تحریک کی بنیاد پاکستانی کرکٹر ، 1992 ورلڈ کپ کے فاتح ، مخیر اور سماجی کارکن عمران خان نے 25 اپریل 1996 کو زمان پارک لاہور میں رکھی تھی۔ مہذب دنیا اور جمہوری معاشرے میں ہر جگہ ایسی سیاسی جماعتیں موجود ہیں جو شہریوں اور حکومت کے مابین خلا کو پُر کرتی ہیں۔ سیاسی پارٹیاں شہریوں میں ان کے حقوق کے بارے میں شعور بیدار کرنے اور ان کے حقوق اور مطالبات کے حصول کےلئے ان کو آگاہ کرنے میں اہم اور فیصلہ کن کردار ادا کررہی ہیں۔ پاکستان تحریک انصاف بھی ایک تحریک ہے۔ 1947 میں قیام پاکستان کے بعد سے اس ملک میں سیاسی نظام قائم کرنے میں ناکامی ہوئی۔  قیام پاکستان کے بعد پاکستان میں سیاسی اور جمہوری ثقافت کو فروغ دینے کے لئے دستور ساز اسمبلیوں کو اختیارات دیئے۔ لیکن بدقسمتی سے ، خان ازم ، نواب ازم اور مذہبی ثقافت کی وجہ سے وہ پاکستان میں سیاسی اور جمہوری ثقافت  میں ناکامی ہوئی۔ چنانچہ اس کے نتیجے میں سیاسی جماعتیں بہت ہی کمزور رہیں کیوں کہ ملک میں جمہوری ثقافت کو فروغ نہیں ملا۔ اس لئے فوجی جرنیلوں کو امور مملکت چلانے کے مواقع فراہم ہوئے ، لہذا پاکستانی سیاست  کا بیشتر حصہ فوجی آمریت کے تحت رہا۔ ایسے ہی  حالات میں پی ٹی آئی نے انصاف کی فراہمی اور پاکستان میں صحت ، تعلیم ، شہری ، فلاح و بہبود ، اور اظہار رائے کی آزادی ، روزگار ، مذہبی ہم آہنگی ، بین المذاہب ہم آہنگی اور مساوی ٹیکس کے نظام کے بارے میں شعور بیدار کرنے کے لئے تحریک کی شروعات کی۔ اس نے پاکستان میں سماجی اور سیاسی ترقی پر توجہ دی۔ پی ٹی آئی  جمہوریت ، حکومت میں شفافیت اور قیادت کے احتساب کے ذریعے پاکستان میں سیاسی استحکام کے لئے پرعزم ہے۔پی ٹی آئی وفاق اور صوبائی خودمختاری پر یقین رکھتی ہے۔ اس کا بنیادی مقصد ایک فلاحی ریاست کا قیام ہے جہاں لوگوں کو سیاسی آزادی ، معاشی مواقع اور معاشرتی انصاف حاصل ہو۔ پی ٹی آئی ملک میں معاشرتی اور معاشی انصاف پر یقین رکھتی ہے جہاں ہر شہری کو انسانی بنیادی ضروریات اور حقوق تک رسائی حاصل ہے۔ پی ٹی آئی واحد سیاسی جماعت ہے جو اسٹیبلشمنٹ کے خلاف ہے۔ پاکستان میں ہر سیاسی جماعت اسٹیبلشمنٹ سے مصافحہ کرکے اقتدار میں آئی تھی ، اس لئے ملک میں تبدیلی لانا مشکل ہے۔ پی ٹی آئی سادہ اور ترقی پسند نظریہ پر مبنی ہے اور عوامی حمایت اور طاقت پر یقین رکھتی ہے۔ وہ پاکستانی سیاست میں جمود کو توڑنے کے لئے اپنی جدوجہد جاری رکھے ہوئے ہے۔ پی ٹی آئی نے 1996 میں قیام کے بعد عمران خان کی سربراہی میں 6 ممبروں کی مرکزی انتظامی کمیٹی کے ساتھ کام کرنا شروع کیا۔ پاکستان تحریک انصاف کے مرکزی انتظامی کمیٹی کے چھ ممبران میں نعیم الحق، احسن رشید، حفیظ خان،مہید حسین،محمود اعوان اور نوشیروان برکی شامل تھے۔ پی ٹی آئی نے 1997 کے عام انتخابات میں نومولود پارٹی کی حیثیت سے حصہ لیا ، حالانکہ پی ٹی آئی عام انتخابات میں ایک بھی نشست جیتنے میں ناکام رہی تھی لیکن عمران خان نے ثابت کیا کہ پی ٹی آئی مسلم لیگ اور پیپلز پارٹی کے خلاف پاکستانی قوم کے لئے متبادل جماعت ہے۔ پی ٹی آئی نے اپنے بچپن کے پہلے انتخابات میں یہ ظاہر کیا کہ مستقبل میں پی ٹی آئی حکمران جماعتوں کے خلاف تیسرا چہرہ ہوسکتی ہے۔ 2002 میں عام انتخابات میں دوسری مرتبہ پی ٹی آئی نے عام انتخابات میں حصہ لیا اور میانوالی سے عمران خان نے قومی اسمبلی کی ایک نشست اور کرک سے میاں نثار گل کاکاخیل نےکے پی اسمبلی میں ایک نشست حاصل کی۔ پی ٹی آئی نے 18 فروری  2008 کے عام انتخابات کا بائیکاٹ کیا۔ پی ٹی آئی نے ڈکٹیٹر پرویز مشرف کے ذریعہ معطل ججوں سے اظہار یکجہتی کے لئے 24 نومبر ، 2017 کو بھوک ہڑتال کیا۔ پی ٹی آئی نے ڈکٹیٹر پرویز مشرف خصوصاً این آر او (قومی مفاہمت آرڈیننس) متعارف کرانے کے فیصلوں کی مخالفت کرنے کے سبب عام انتخابات 2008 کا بائیکاٹ کیا۔ 30 اکتوبر 2011 کے لاہور جلسہ کی وجہ سےپی ٹی آئی کی مقبولیت میں اضافہ ہوا۔  یہ جلسہ پاکستانی سیاسی تاریخ کا سب سے بڑا جلسہ قرار پایا گیا۔2013 کے عام انتخابات میں تحریک انصاف نے تیسری بار حصہ لیا اور ملک میں تیسری بڑی سیاسی طاقت بن کر ابھری۔  خیبر پختونخوا میں پہلی پوزیشن لی۔ کے پی کےمیں پی ٹی آئی نے بطور وزیراعلی کے پی پرویز خٹک کی سربراہی میں مخلوط حکومت تشکیل دی۔ نیٹو سپلائی اور ڈرون حملے کے خلاف پی ٹی آئی کا پہلا دھرنا 24 نومبر ، 2013 سے 26 فروری 2014 تک پشاور میں ہوا۔  عمران خان نےاین اے 57 ، این اے 110 ، این اے 122 اور این اے 125 کے 4 حلقوں میں دوبارہ گنتی کا مطالبہ کیا۔پی ٹی آئی ریسرچ ونگ نے یہ ثابت کرنے کے لئے 2100 صفحات پر مشتمل کتاب تیار کی کہ 2013 کے انتخابات میں دھاندلی ہوئی تھی۔ پی ٹی آئی نے انتخابی دھاندلی کی طرف الیکشن کمیشن آف پاکستان کی توجہ مبذول کروانے کے لئے تمام قابل رسا جمہوری ذرائع کا استعمال کیا۔ عمران خان کا مؤقف تھا کہ سپریم کورٹ انتخابات کےنتائج کا نوٹس لے۔ تمام قانونی فورم سے مایوسی کے بعد پی ٹی آئی نے 22 اپریل 2014 کو دھاندلی زدہ الیکشن کے خلاف اپنی تحریک شروع کرنے کا باضابطہ اعلان کیا۔ پنجاب اور اسلام آباد کے تمام شہروں میں احتجاجی ریلیاں نکالی گئیں۔ بعدازاں پی ٹی آئی نے 14 اگست 2014 کو اسلام آباد میں دھرنا دینے کا اعلان کیا۔ روز بروز پی ٹی آئی کی مقبولیت بڑھتی جارہی ہے۔ پی ٹی آئی کی مقبولیت کا بنیادی نکتہ پاکستان کی سیاسی جماعتوں میں بدعنوانی ، سیاست کی نوعیت ، جمہوری اصولوں ، نوجوانوں کی شرکت اور سیاسی سرگرمیوں میں سوشل میڈیا کا کردار ہے۔ پاکستان میں سیاسی جماعتیں ذاتی نوعیت کی ہیں پارٹیاں خاندانی لیمیٹیڈ کمپنیاں بن چکی ہیں۔ پارٹیوں کو ذاتی حیثیت دینے کی وجہ سے پارٹیوں کے اندر جمہوری ثقافت کے مواقع کم ہیں لہذا ، پاکستانی سیاسی جماعتیں سیاسی جماعتوں کے بجائے قبائلی اور ثقافت پر مبنی گروہ دکھائی دیتی ہیں اٹھارہویں آئینی ترمیم میں سیاسی جماعتوں نے اسلامی جمہوریہ پاکستان کے آئین سے انٹرا پارٹی انتخابات کی ذیلی شق کو ختم کردیا۔ چونکہ ان سیاسی جماعتوں کو نچلی قیادت اور نچلی سطح کے کارکنوں کو بااختیار بنانے کی کوئی دلچسپی نہیں تھی۔ اس کے برعکس پی ٹی آئی نے یو سی سطح سے لے کر مرکز ی سطح تک عوامی ووٹوں پر انٹرا پارٹی الیکشن کروائی۔ اس کے نتیجے میں  پی ٹی آئی کی صفوں میں نئی ​​  اور نوجوان قیادت ابھر کر سامنے ائی۔تحریک انصاف کے ایجنڈے اور نظریہ کو فروغ دینے میں نوجوانوں نے نمایاں کردار ادا کیا۔ 2018 کے عام انتخابات میں ، پی ٹی آئی قومی اسمبلی ، خیبرپختونخوا اور پنجاب اسمبلی میں اکثریتی جماعت بن کر ابھری۔۔ پی ٹی آئی نے اسلامی جمہوریہ پاکستان کے 22 ویں وزیر اعظم کی حیثیت سے عمران خان کی سربراہی میں مرکزی حکومت تشکیل دی۔ کے پی اسمبلی میں پی ٹی آئی نے غلبہ حاصل کیا اور محمود خان کے تحت کے پی کے سی ایم کی حیثیت سے اپنی صوبائی حکومت تشکیل دی جبکہ پنجاب میں عثمان بزدار کی قیادت میں حکومت بنائی۔ جبکہ بلوچستان میں پی ٹی آئی نے مخلوط حکومتیں تشکیل دی۔ 2018 کے جنرل انتخابات میں کل 16.8 ملین ووٹوں کے ساتھ سب سے بڑی پارٹی بن کر ابھری۔پی ٹی آئی عمران خان کی  جادوئی قیادت میں پارٹی کو انسٹی ٹیوٹ میں تبدیل کرنے کے انقلابی پروگرام پر کام کررہی ہے اور اس حوالے سےیکم مئی 2019 کو پارٹی کے دوسرے آئین کا اعلان کیا گیا۔  امید ہے کہ پاکستانی سیاسی جماعتوں کا سیاسی کلچر بدلا جائے گا۔ صرف پی ٹی آئی ہی ثقافت اور قبائلی اصولوں پر مبنی سیاسی نظام سے جمہوری اصولوں کی طرف منتقلی میں کردار ادا کرسکتی ہے اور آنے والے وقت میں پاکستانی جمہوریت پی ٹی آئی کے نوجوانوں اور عمران خان کی جدوجہد کی وجہ سے لوگوں کے سامنے زیادہ جوابدہ اور منصفانہ ہوگی۔