CM KPK talking with DG NADRA and Peshawar Press Club President meets CM

Tuesday, 18 April 2017 11:30 | READ 255 TIMES Written by 
RATE THIS ITEM
(0 votes)

With the Compliment of Press Secretary to Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa
Handout No.2 /Peshawar/ DT: 13thApril 2017

Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa Pervez Khattak said here today his government was bringing amendment to the existing Ehtesab Act empowering the Chief Justice of Peshawar High Court and the committee under him for the search and scrutiny and subsequent nomination and appointment of the DG Ehtesab Commission. The nomination of the Chief Justice of Peshawar High Court and the four judges committee would be binding and final that would remove all the doubts, speculations of influences on the Ehtesab commission and its proceeding. He said his government gave a transparent system of governance, brought legislations and reforms in consultation with the opposition. All these were consensus decisions of both the treasury and opposition in the Provincial Assembly.

He was talking to the cabinet members of the Peshawar Press Club led by its president Alamgir Khan here at Chief Minister House Peshawar. The Chief Minister said that it was his wish that whenever he got the power and authority, he would give a system to the Province which would stand for giving justice to the poor, “making public institutions free from corruption and will enable the poor to be master of their own destiny”. This is what he made it.

He said his government had concluded an agreement with the Malaysian investors for the establishment of the Halal Food Industry which would not only market Halal products and the country but would also be exported to foreign countries. He said it was a unique industrial concern given the ground situation where halal food in our own country was emerging as serious problems.
He said regarding the empowering of chief justice Peshawar High Court for the selection and subsequent appointment of DG Ehtesab, he said that his government had, after thought provoking debates, decided that when they had noble intentions making the whole governance structure including the rulers accountable and even then their tenacity was always doubted therefore in the given background, the best option is to give all the power to the Chief Justice and the Committee he is heading to nominate and appoint DG Ehtesab Commission. This is exactly what the government made up of its mind for empowering the Chief Justice Peshawar High Court for the appointment of DG Ehtesab Commission. He said that all legislations and reforms his government made were for the public interest. It was the only government that devolved all powers and authority to strengthen institutions so that the institutions had an inbuilt mechanism to deliver in consonance with the people aspiration, he added.
The Chief Minister said his government laid down the structure for good governance and with the passage of time, the system’s weaknesses would emerge and could be addressed to. He also hinted at the Malaysian government keenness for the cooperative farming in the province and added that he offered them the required one lac acre of land in D.I.Khan linking it to sponsor the Chasma lift irrigation scheme in D.I.Khan for making the barren land of the area cultivable.
He referred to the record legislations and reforms that his government introduced and enacted with consensus talking the opposition on board in the whole process and added that now the reformed system started delivering. He said that he was in favour of increasing the salaries of the officials running the system so that they could take care of their needs and spending and could work with more focus approach for the efficient delivery. He said that now there was no corruption in the public sector institution which was rampant in the previous government. He lamented that his government provided resources for the provision of electricity etc to different areas of the province but the federal government was not delivering for the provision of transformers and others requirements therefore hindering the process of electrification and the federal government also wanted to take credit for it.
Pervez Khattak also talked about the mega projects adding that though education health sector reforms free corruption system and provision of justice to the people and merit based recruitments etc were his mega projects still he started Swat Motorway integrating the whole province and opening the tourism potential areas and also his government started a rapid bus transit which would integrate 7 feeding routs to the man corridor. The original cost is Rs. 33 billion for the main corridor and it would require additional spending for the upgradation of 7 feeding routes, commercial parking and plazas. He also assured the resolution of the problems of the journalists for which he has already issued directives.


<><><><>

With the Compliment of Press Secretary to Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa

Handout No.3 /Peshawar/ DT: 13thApril 2017

Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa Pervez Khattak has termed the blockage of National Identity Cards of countless of the people of Khyber Pakhtunkhwa on basis of their tribes and ethnicity as highly discriminatory attitude on the part of federal government. He asked for reviewing such an inimical attitude forthwith, unblocking the genuine NICs in the earliest and clarifying the situation in next couple of days. Chief Minister showed the dismay and concern of provincial government on the issue during meeting with DG NADRA Gohar Ahmad Khan who called on him at Chief Minister Secretariat Peshawar on Thursday. Gohar Khan however told that federal government realized sensitivity of the issue wherein certain concrete steps were being taken to unblock many NICs whereas system was also being evolved about verification process and other public complaints on blocked NICs. However, he explained that NADRA was facing shortage of work force in the verification process.
The Chief Minister while expressing un-satisfaction over this explanation, directed to summon joint meeting of the NADRA as well as the federal and provincial intelligence and security agencies including Home, Revenue, Police and Pak Army to be held within a fortnight at Peshawar. He made clear that he would himself attend this meeting to see the development and adopt the future strategy of provincial government in light of it. He lamented that miseries of the poor people of that province were multiplied with blocking of their NICs which otherwise played front role in war against terrorism and this situation was quite unbearable for his government.
Pervez Khattak also expressed his resentment that NIC of the one of five brothers in a family was blocked and such a situation was not faced by the people or families of a particular area but happened in every district and even to people at village and town level. He said that this situation not only increased in anxiety of the masses but also put a question mark on performance of the concerned federal entities.
Chief Minister while explaining the poor state of affairs also gave example of people of his own constituency and said that many individuals of Mohallah Suleman Khel in his area have been declared as Afghans and their NICs blocked by NADRA though he personally knew that they were patriotic Pakistanis and living there for centuries.
Pervez Khattak said that the federal government should have a transparent system for permanent solution of the issue. The system should also have time lines for the delivery of services to the citizens; and upon the violation, the concerned officers should be punished and fined, he added. He underlined awareness campaign in cities and village level in order to keep the masses aware of their faults and mistakes in this regard and enable them to rectify it. He hoped that NADRA will take this issue seriously and show clear progress within two weeks and bring a transparent policy and strategy to satisfy the citizens regarding their citizenship.
<><><><><><><>

بہ تسلیمات پریس سیکرٹری برائے وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا
ہینڈ آؤٹ نمبر2 پشاور 13اپریل 2017
وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے کہا ہے کہ حکومت موجودہ احتساب ایکٹ میں بہت جلد ترامیم لا رہی ہے ۔ سرچ، سکروٹنی اور اسکے نتیجے میں ڈی جی احتساب کمیشن کی نامزدگی کے اختیارات چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ اور ان کے نیچے چار ججوں پر مشتمل سکروٹنی کمیٹی کو دے رہے ہیں ۔ چیف جسٹس پشاور ہائی کورٹ اور چار ججوں پر مشمل کمیٹی کی نامزد گی لازم العمل اور ختمی ہوگی جو احتساب کمیشن اور اسکے عمل پر اثر انداز ہونے کے حوالے سے کسی بھی موجود حکومت پر تمام تر شکوک و شبہات اور قیاس آرائیوں کو دور کر دے گی۔ ہم نے صوبے کو شفاف سسٹم دیا، تمام تر قوانین اور اصلاحات اپوزیشن کے ساتھ اتفاق رائے سے عمل میں لائے۔ارمان تھا کہ موقع ملنے پر صوبے کو ایسا نظام دوں کہ غریب کو انصاف ملے۔ادارے کرپشن سے پاک ہوں اور عوام کو بااختیار کرکے اپنے لئے تبدیلی لائیں۔قوانین کے ذریعے اپنے آپ کو جواب دہ بنایا، خود اقتدار میں ہو کر اپنے اوپر پابندیاں لگائیں۔ملائشین حکومت کے تعاون سے صوبے میں حلال فوڈ کی صنعت اپنی نوعیت کا منفرد منصوبہ ہو گا۔ ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ اور اپ گریڈیشن کر چکے ہیں، اب افسران کی تنخوائیں بڑھائیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے وزیر اعلیٰ ہاؤس پشاور میں صدرپشاورپریس کلب عالمگیر کی سربراہی میں پریس کلب کی کابینہ کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔احتساب ایکٹ کے حوالے سے وزیر اعلیٰ نے انکشاف کیا کہ وہ بہت جلد خیبر پختونخوا احتساب ایکٹ میں ترامیم لا رہے ہیں جن کے ذریعے ڈی جی کی جانچ پرکھ اور نامزدگی کے اختیارات چیف جسٹس کو دیئے جائیں گے۔ا حتساب کمیشن پر اعتراضات آ رہے تھے جسکی وجہ سے ہم شفاف طریقے کے لئے ہائی کورٹ کو اختیار دے رہے ہیں۔ہم قانون سازی ، نظام اور عوام کو مضبوط کرنے کے لئے کر رہے ہیں ۔ یہ واحد حکومت ہے جس نے خود کو جواب دہ بنانے کے لئے قانون سازی کی اور اپنے اختیارات اداروں کو دیئے۔ اگر ہم میں غلطی اور کمزوری ہو گی تو یہ قوانین سب سے پہلے ہم پر لاگو ہو ں گے۔ہم میرٹ کی بالادستی پر یقین رکھتے ہیں اور حکمرانی کے مجموعی عمل میں شفافیت کے قائل ہیں۔جب میرٹ پر فیصلے ہوتے ہیں تو اعتراضات ختم ہو جاتے ہیں۔ احتساب کے نظام کو مزید مؤثر اور شفاف بنانے کے لئے کل وقتی کام کرنا ہوگا۔ وزیر اعلیٰ نے واضح کیا کہ ہمیں اللہ تعالیٰ کا ڈر اور خوف ہے۔ ہم سب سے پہلے اپنے رب کو جواب دہ ہیں اس لئے ہم نے جواب دہی کے کل وقتی نظام کی بنیادیں رکھ دی ہیں۔ انکی حکومت اپنے اختیارات کے مطابق صوبے میں اسلامی قوانین اور اقدار کے فروغ کے لئے عملی کام کر رہی ہے۔ ایم ایم اے اپنے پانچ سالہ دور حکومت میں جو نہیں کر سکی صوبائی حکومت نے عملاً کرکے دکھایا ہے۔ نجی سود کے خلاف قانون بنا چکے ہیں۔ جس کے تحت گرفتاریوں کا عمل شروع ہے۔ غیر شرعی جہیز کے خلاف قانون بھی انکی حکومت کا اسلام دوست اقدام ہے۔وزیر اعلیٰ نے واضح کیا کہ حال ہی میں سابق ملائیشن وزیر اعظم کے ساتھ حلال فوڈ کی صنعت کے قیام کے لئے ایم او یو ہو چکا ہے۔ حلال اور حرام کی تصدیق کے لئے غازی میں پروگرام شروع کر رہے ہیں جو ملک میں اپنی نوعیت کا واحد منصوبہ ہو گا کیونکہ درآمدات میں حلال اور حرام اجزاء کی تشخیص صحت کے لئے بہت ضروری ہے۔روزمرہ استعمال کی بہت سے د رآمدات میں حرام اشیاء کی ملاوٹ ہوتی ہے مگر بد قسمتی سے ہمارے ہاں انکی تصدیق کے لئے کوئی ادارہ موجود نہیں۔وزیراعلیٰ نے انکشاف کیا کہ ملائشین حکومت نے کوآپریٹیو فارمنگ کیلئے ایک لاکھ ایکڑ اراضی مانگی ہے جس کیلئے ڈیرہ اسماعیل میں زمین کی فراہمی زیر غور ہے ہم نے ان کو چشمہ لفٹ سکیم میں سرمایہ کاری کی بھی پیش کش کی ہے۔ وزیر اعلیٰ نے اصلاحاتی اقدامات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ان کا ارمان تھا کہ صوبے کو ایک قابل عمل اور شفاف نظام دوں جہاں غریب عوام کو صحت ، تعلیم اور سماجی خدمات کے دیگر شعبوں میں سہولیات میسر ہوں۔حقدار کو حق ملے ۔ کسی سے نا انصافی نہ ہو۔ تھانے میں غریب کو عزت ملے اور ادارے عوام کو خدمات کی فراہمی پر جواب دہ ہوں۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ انکی حکومت نے اس مقصد کے لئے ریکارڈ قانون سازی کی ۔ اصلاحات کے ذریعے اداروں کو ڈیلور کرنے کے قابل بنایا۔ اس عمل کو کل وقتی بنانے کے لئے جہاں دیگر اقدامات اٹھائے وہاں سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں ریکارڈ اضافہ کیا اور اپ گریڈیشن کی۔ اب افسر ان کی تنخواہیں بڑھائیں گے تاکہ وہ اپنے اخراجات پورے کر سکیں ۔ انہیں مالی مسائل کا سامنا نہ ہو اور خوش اسلوبی سے اپنے پیشہ ورانہ فرائض انجام دے سکیں۔ ہم کرپشن نہ کرنے کا ماحول دیں گے کیونکہ جب کم تنخواہ پر مالی امور کو نمٹانا مشکل ہو تو کرپشن کے دروازے کھلتے ہیں۔وزیراعلیٰ نے سکولوں میں بجلی کی فراہمی کے حوالے سے ایک سوال پر کہا کہ ہم ٹرانسفارمرز اور ٹیوب ویلز کیلئے وسائل دے چکے ہیں مگر وفاق کام نہیں کررہا۔وزیراعلیٰ نے ہسپتالوں میں عوام و خواص کی آمد پر مریضوں کیلئے مشکلات کے حوالے سے کہا کہ انہوں نے ہسپتالوں میں ایمرجنسی ایکٹ نافذکیا ہے اس میں کوئی شک نہیں کہ ہسپتالوں میں پریس ٹاک، فوٹو سیشن اوراس طرح کی دیگر سرگرمیوں کی وجہ سے بدنظمی پیدا ہوتی ہے۔انہوں نے کہا کہ وہ مریضوں کی عیادت کیلئے آنے والے حکومتی اراکین اور دیگر لوگوں کیلئے طریقہ کار وضع کرنے کی ہدایت کر چکے ہیں تا کہ بدنظمی اور پریشانی پیدا نہ ہو۔ صوبے میں ترقیاتی منصوبوں کے حوالے سے بات کرتے ہوئے وزیراعلیٰ نے کہا کہ ترقیاتی منصوبوں پر کام اپنی جگہ جاری ہے اور ان کی اہمیت بھی اپنی جگہ ہے۔ مقصد عوام کو درپیش مسائل کا حل نکالنا ہے۔ صوبے کو شفاف نظام اور ڈیلیور کرنے کے قابل ادارے دینا انکی حکومت کا میگا پراجیکٹ ہے۔ تاہم ضرورت کے مطابق ترقیاتی سرگرمیاں بھی جاری ہے۔ سوات موٹر وے جو اپنی نوعیت کا کسی بھی صوبائی حکومت کے اپنے و سا ئل سے تعمیر ہونے والا واحد منصوبہ ہے ، دسمبر2017 تک مکمل ہوجائیگاپشاور بس ریپڈ منصوبے پر بھی آئندہ اگست سے کام شروع ہو رہا ہے اس مہینے ٹینڈرز کا عمل مکمل ہو جائیگا۔ وزیراعلی نے واضح کیا کہ بی آر ٹی کے بنیادی منصوبے پر 33 ارب روپے لاگت آئیگی تاہم مین کوریڈور کے علاوہ سات رابطہ روٹس اور دیگر سہولیات بھی اسکے علاوہ ہونگی جو ملک میں اس نوعیت کے کسی بھی منصوبے میں شامل نہیں ہیں۔ دو ارب روپے صرف یوٹیلٹیزہٹانے پر خرچ ہونگے۔وزیراعلیٰ نے اس موقع پر صحافیوں کی فلاح کیلئے حکومتی عزم کا اعادہ کرتے ہوئے کہاکہ وہ صحافیوں کو درپیش مسائل سے بخوبی آگاہ ہیں۔ اور مسائل کے حل کیلئے پہلے سے ہدایات جاری کر چکے ہے۔ وزیراعلیٰ نے اس موقع پر موجود متعلقہ حکام کو صحافیوں کیلے پلاٹوں کا طریقہ کا ر وضع کرنے کی ہدایت کی۔
<><><><><><>
ہینڈ آوٹ نمبر۔3 ۔پشاور۔13 اپریل2017 ء
وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا پرویز خٹک نے قومیتوں کی بنیاد پر صوبے کے لاتعداد شہریوں کے شناختی کارڈ بلاک کرنے کو امتیازی سلوک قرار دیتے ہوئے وفاقی حکومت سے اس معاندانہ طرز عمل پر فوری نظر ثانی کرنے , بلاک شناختی کارڈ کھولنے اور اسی مقصد کیلئے اگلے چند روز میں صورتحال مکمل طور پر واضح کرنے کا مطالبہ کیا ہے انہوں نے اس سلسلے میں اپنی تشویش کا اظہار نادرا کے ڈی جی گوہر احمد خان سے ملاقات کے دوران کیا جس نے وزیراعلیٰ سیکرٹریٹ پشاور میں اُن سے ملاقات کی۔ گوہر خان نے بتایا کہ وفاق کو معاملے کی نزاکت کا احساس ہے اور اگلے چند روزمیں اس ضمن میں بعض ٹھوس اقدامات کئے جارہے ہیں جس کے نتیجے میں کئی بلاک شناختی کارڈ کھول دیئے جائیں گے جبکہ ویرفیکیشن اور دیگر شکایات کی بناء پر بلاک شناختی کارڈوں کیلئے بھی پالیسی واضح کر دی جائے گی تاہم انہوں نے بتایا کہ ویریفیکیشن کا عمل تیز کرنے کیلئے ادارے کو ورک فورس کی کمی کا مسئلہ درپیش ہے۔وزیراعلیٰ نے ڈی جی نادرا کی وضاحت پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے مسلسل گھمبیر بننے والے اس حساس معاملے پر دوہفتے بعد نادرا کے علاوہ محکمہ ہائے داخلہ، ریونیو، پولیس اور پاک فوج سمیت تمام وفاقی و صوبائی انٹیلی جنس و سیکورٹی اداروں کا مشترکہ اجلاس پشاور میں بلانے اور صورتحال کا باریک بینی سے جائزہ لینے کی ہدایت کی نیز واضح کیا کہ وہ اجلاس میں خود شریک ہو کر اس ضمن میں ہونے والی پیش رفت کو دیکھیں گے اور اس کی روشنی میں صوبائی حکومت کا آئندہ لائحہ عمل طے کریں گے ۔انہوں نے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں فرنٹ رول ادا کرنے والے صوبے کے غریب عوام کو دیگر مشکلات کے علاوہ شناختی کارڈ بلاک کی مصیبت میں بھی مبتلا کرنا ظلم و زیادتی کی انتہا ہے جو صوبائی حکومت کیلئے ناقابل برداشت ہے ۔ انہوں نے کہاکہ حیرت انگیز بات یہ ہے کہ ایک ہی خاندان میں پانچ بھائیوں میں ایک بھائی کا شناختی کارڈ بلاک جبکہ دوسروں کے درست ہیں اور اس افسوسناک صورتحال کا سامنا کسی ایک علاقے نہیں بلکہ صوبے کے ہر ضلع حتیٰ کہ گلی محلہ کے لوگوں اور خاندانوں کو درپیش ہے جس سے عوام کی پریشانیوں میں اضافے کے علاوہ اداروں کی جگ ہنسائی بھی ہو رہی ہے اور یہ وفاق کیلئے لمحہ فکریہ اور سوالیہ نشان بن چکا ہے۔ پرویز خٹک نے کہاکہ اُن کے اپنے علاقے کے ایک محلہ سیلمان خیل میں پورے قبیلے کو افغان قرار دے کر بیشتر لوگوں کے شناختی کارڈ بلاک کئے گئے ہیں حالانکہ اُن کے آباؤ اجداد صدیوں سے وہاں رہائش پذیر اور محب وطن پاکستانی ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ وفاق کو اس سلسلے میں ہر قسم کے ابہام سے پاک سسٹم بنانا ہو گا جس پر پوری شفافیت اور درستگی سے عمل کرنا اور بلاک شناختی کارڈوں کا مسئلہ مستقل بنیادوں پر حل کرنے کے علاوہ خیبرپختونخوا حکومت کی طرز پر شہریوں کے ہر کام اور خدمات کی تکمیل کا واضح دورانیہ مقرر اور عدم تعمیل پر متعلقہ افسران کی سرزنش اور جرمانوں کا تعین ہونا چاہیئے ۔نادرا کی طرف سے بلاک شناختی کارڈوں سے متعلق بعض معروضات اور وضاحتوں پر وزیراعلیٰ نے ہدایت کی کہ اس ضمن میں میڈیا کے علاوہ شہروں اور دیہات میں گلی محلہ کی سطح پر عوامی آگہی کی مہم چلانی چاہیئے تاکہ عوام کو بلاک شناختی کارڈوں سے متعلق اپنے قصور اور غلطیوں کا علم ہو اور اس کا تدارک بھی کرسکیں ۔انہوں نے اُمید ظاہر کی کہ پندرہ روز بعد اجلاس میں نادرا کی طرف سے بلاک شناختی کارڈ کھولنے سے متعلق واضح پیش رفت کے علاوہ شناختی کارڈ وں کی تیاری سے متعلق شفاف پالیسی اور لائحہ عمل سامنے لایا جائے گا تاکہ شہری کم ازکم اپنی شہریت کے بارے میں تو مشکلات کا شکار نہ ہوں اور اُنہیں اس ضمن میں اطمینان مہیا ہو ۔

<><><><><><>

13-apr13-4-2017 CM Urdu Handout talking with DG NADRA and meets Peshawar Press Club President1

13-apr13-4-2017 CM Urdu Handout talking with DG NADRA and meets Peshawar Press Club President2

13-apr13-4-2017 CM Urdu Handout Condolence