CM presiding over a meeting with Chairman WAPDA and addressing 17th Gems & Mineral Show

Tuesday, 14 March 2017 07:10 | READ 69 TIMES Written by 
RATE THIS ITEM
(0 votes)

WITH THE COMPLIMENTS OF PRESS SECRETARY TO CHIEF MINISTER KHYBER PESHAWAR

Handout No. 1 Peshawar 13th March 2017

Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa Pervez Khattak hinted at bringing 4 thousand mega watt of electricity to the system by February 18, 2018. Munda Dam stood approved that will protect the entire Peshawar valley from the future flood devastation.

He directed for the expeditious land acquisition for Bhasha Dasu Dams and working out the plan that will manage and run Pehure Project, further directing to extend the regulatory framework for all Khwarh (natural water flow) throughout the province.

These directions he made during a high level meeting with Chairman WAPDA here at Chief Minister House Peshawar. Senior Member Board of Revenue, Administrative Secretaries and others attended. The meeting had a detailed discussion on the land acquisition for the Bhasha and Dasu Dams and the management and running of Pehure Project.

The Chief Minister directed to make up their mind and evolve a workable mechanism for the management and operationalization of Pehure project. The Chief Minister said his government has initiated a number of hydro power undertakings that would add an additional 4 thousand megawatt of electricity to the national grid.

The Chairman WAPDA added that the provincial government should firm up their claims for additional electricity to be brought to the national system in the overall net hydel profit claims in order to avert any uneasiness in future. The meeting was told about the disputed issues of the land acquisition for Dasu Dam in areas such as Sagloo, Zaal and Kass of Kohistan. It also discussed the 969 acres of land available for the construction work and catchment area of the dams.

Pervez Khattak directed for finding a reasonable solution to the problems and extending incentives to the people. He also directed for proper relocation of affected people and the provincial government departments and WAPDA should sit together to reach a reasonable solution.

Chief Minister asked for the upgradation of system in Chitral so that the electricity to be produced through different projects as being negotiated with FWO could be carried out by the upgraded system. Chairman WAPDA assured in this regard.

Pervez Khattak added that Chashma Lift Canal Scheme has been approved in the context of CPEC. The Chinese have indicated their willingness for upgrading Rashakai Industrial City on 40 thousand kanal of land and the relocation of different labour intensive industries.

Chief Minister hoped that the construction of different small and medium reservoirs including Munda would overcome the drinking water facilities in Peshawar valley. He also stressed for the construction of Barrages on river Swat and river Dir that would lead to protect the entire population on both sides of the two rivers who were devastated by the flood in the past.

<><><><><><><><>

Handout No.2 Peshawar 13th March 2017

Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa Pervez Khattak has said his government went for out of the box solution for the Rapid Industrialization in the province in order to produce wide range of employment opportunities. He assured to take up with the federal government the problems of the exporters. His government would market the natural advantages including the mineral blocks in the Beijing Road Show in April. He announced a geo Mineral processing zone in Rashakai, Buner Marble city, Industrial Park and autonomous Mines and Mineral Company soon. He assured plot for commercial exporters association adding that the mineral leasing process was made transparent. The investors reposed confidence in the whole process. His government was upgrading the mineral testing lab and the establishment of Mineral Park, he added.

Pervez Khattak said CPEC was a game changer for Pakistan but there was another CPEC emerging out of the whole CPEC for the province. He assured his government would facilitate establishment of industrial unit, safeguarding the investment of investors and would give them an ideal environment for investment.

These remarks he made during his speech to the 17th Gems & Mineral Show at a local hotel Peshawar. Senior Minister Sikandar Hayat Khan Sherpao, Deputy Speaker Provincial Assembly Dr. Mehar Taj Roghani, Special Assistant to CM Akbar Ayub, MPA Fazal Shakoor, Secretary Mineral Syed Zaheer-ul-Islam, Council General Iran, officials of Pakistan Commercial Exporters Association and EZDMC also attended.

The Chief Minister announced the holding of Gems & Mineral show twice in a year. His government has made the natural advantages of the province, the base of economic stability of the province, he added. He said the province had a rich natural resource base required for industrialization and growth. Our government has already planned it and has given a provincial industrial policy and mineral policy. These policies extended unmatched incentives to the investors adding that mineral act 2016 in Khyber Pakhtunkhwa had become a reality. Geo Chemical Survey of the natural resources of the province was going on and the mineral testing lab was being upgraded and the exploration and exploitation of coal in the province was going on. He said his government’s pro investment policy attracted huge investment to the province adding that his government was holding a road show in Beijing in April where the natural advantages of the province would be marketed, he added.

Pervez Khattak said his government came to power with one point agenda to reform the system adding that in the process it faced multi-faceted challenges but we overcame them and the difference is visible now. Chief Minister also spoke about his health reforms, quality of education, revamping of institutions, establishment of peace, provincial rights, economic stability and industrialization that the people took well. He said that the record legislations his government introduced, improved the style of governance adding that his government considered education as the base for new Pakistan. He said his government increased 30% the overall educational budget and took a number of decisions for efficient healthcare including giving autonomy to the tertiary healthcare. These steps, he added started delivering in consonance with the people aspirations.

<><><><><><><>

بہ تسلیمات پریس سیکرٹری برائے وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا
ہینڈ آؤٹ نمبر1پشاور 13مارچ2017
وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت نے صنعتکاری کے فروغ کے لئے روایات سے ہٹ کر عملی اقدامات اٹھائے ہیں تاکہ روز گار کے وسیع مواقع پیدا کئے جا سکیں۔ ایکسپورٹ میں مشکلات کے مسئلے کو وفاقی حکومت کے ساتھ اٹھائیں گے۔ اپریل میں بیجنگ کے روڈ شو میں منرل بلاکس کی یکسپلوریشن کے منصوبوں کو بھی سرمایہ کاری کے لئے پیش کریں گے۔ انہوں نے رشکئی میں جیو منرل پروسیسنگ زون، بونیر ماربل سٹی، انڈسٹریل پارک کے قیام اور با اختیار مائنز اینڈ منرل کمپنی بنانے کا اعلان کیا ہے۔کمرشل ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن کے دفتر کے لئے زمین کی فراہمی کے لئے اقدامات کئے جائینگے ۔ معدنیات کے شعبے میں لیزنگ کا شفاف عمل یقینی بنایا گیا ہے جس پر سرمایہ کاروں نے بھرپور اعتماد کیا ہے ۔منرل ٹسٹنگ لیبارٹری کی اپگریڈیشن اور منرل پارک کا قیام عمل میں لایا جا رہا ہے۔ سی پیک پورے ملک کیلئے گیم چینجر ہے لیکن سی پیک کے تناظر میں صوبے کیلئے علیحدہ سی پیک ابھر رہا ہے۔ انہوں نے یقین دلایا کہ صوبائی حکومت صنعتوں کے قیام اور سرمایہ کاری کے لئے صنعتکاروں ، سرمایہ کاروں اور تاجروں کی ہر ممکن مدد کرے گی۔وہ پشاور کے مقامی ہوٹل میں 17ویں جیمز اینڈ منرل شو کی افتتاحی تقریب سے خطاب کررہے تھے۔ صوبائی سینئر وزیر سکندر حیات خان شیرپاؤ، ڈپٹی سپیکر صوبائی اسمبلی ڈاکٹر مہر تاج روغانی ، وزیر اعلیٰ کے مشیر اکبر ایوب، ایم پی اے فضل شکور، سیکرٹری معدنیات سید ظہیر السلام،قونصل جنرل ایران، پاکستان کمرشل ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن اور ازمک کے اعلیٰ حکام اور سرمایہ کاروں نے شرکت کی۔ وزیر اعلیٰ نے جمز اینڈ منرل شو ہر چھ مہینے کے بعد منعقد کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا کہ خیبرپختونخوا کے قدرتی وسائل کو معاشی استحکام کی بنیاد بنانا صوبائی حکومت کی قومی ترقی کیلئے پالیسی کا لازمی حصہ ہے ۔خیبرپختونخوا میں قدرت کے بیش بہا قدرتی خزانے سے ماضی میں استفادہ نہیں کیا گیا۔بے شمار معدنز اور دیگر خام مواد صوبے میں صنعتوں کے فروغ کے لئے بڑی اہمیت رکھتا ہے ۔ہم صوبے میں قدرتی وسائل کی برتری کو معاشی استحکام کی بنیاد بنانے کے لئے جامع منصوبہ بندی کر چکے ہیں ۔ پہلی بار صوبائی صنعتی پالیسی اور صوبائی معدنی پالیسی تشکیل دی گئی ہے ۔ان پالیسیوں کے تحت صوبے میں سرمایہ کاری کے لئے پر کشش مراعات دی جارہی ہیں۔خیبرپختونخوا منرل ایکٹ 2016 بھی بن چکا ہے۔صوبہ بھر میں معدنی ذخائر کا جیو کیمیکل سروے جاری ہے۔ کوئلہ کی ماڈل کان کا قیام بھی عمل میں لایا جا رہا ہے۔ منرل ٹیسٹنگ لیبارٹری کو اپ گریڈ کیا جا رہا ہے۔ صوبے بھر میں کوئلہ کے ذخائر کی تلاش جاری ہے۔ منرل پارک قائم کیا جا رہا ہے جو ہماری حکومت کی ترقی دوست پالیسیوں کا عکاس ہے۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ بیجنگ میں موجوزہ روڈ شو آئیندہ ماہ اپریل میں منعقد کیا جائے گا۔ روڈ شو میں مارکیٹ کرنے کیلئے ہر محکمے میں منصوبے تیار کر چکے ہیں۔ انہوں نے صوبائی حکومت کی اصلاحات کے حوالے سے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کی اتحادی حکومت تبدیلی کے یک نکاتی ایجنڈے کے تحت جب اقتدار میں آئی تو اُسے بے شمار چیلنجز کا سامنا تھا ۔ہماری اتحادی حکومت نے گزشتہ تین سالوں میں نظام کی تبدیلی کیلئے اپنے اہداف کے حصول کیلئے عزم دکھایا جس کا فرق واضح نظر آئے گا۔ہماری حکومت نے شروع دن سے عوام کو صحت اور تعلیم کی معیاری سہولیات کی فراہمی ، اداروں کی تعمیر نو و بحالی ، امن کے قیام ، صوبائی حقوق کے تحفظ ، معاشی استحکام ، صنعتوں اور سرمایہ کاری کے فروغ اور عوام کے حکومت پر اعتماد کی بحالی پر کام شروع کیا۔صوبے میں بہترین طرز حکمرانی کے لئے ریکارڈ قانون سازی کی گئی۔جس کی ماضی میں مثال نہیں ملتی ۔سو سے زائد قوانین پاس کئے جا چکے ہیں جبکہ 150 کے قریب ترامیم تکمیل کے مراحل میں ہیں۔صوبائی حکومت تعلیم کو ترقی اور نئے پاکستان کی بنیاد سمجھتی ہے ۔ حکومت نے اپنے پہلے بجٹ میں ہی تعلیم پر مجموعی اخراجات میں 30 فیصد ریکارڈ اضافہ کیا ۔ شعبہ صحت میں عوام کو معیاری خدمات کی فراہمی کے لئے بھی متعدد اقدامات کئے گئے ہیں۔ خیبرپختونخوا کے ہسپتالوں کو میڈیکل ٹیچنگ انسٹی ٹیوٹ ایکٹ کے تحت مکمل خودمختاری دی گئی ہے ۔ ہمارے اقدام سے ادروں نے عوامی خواہشات کے عین مطابق ڈیلیور کرنا شروع کر دیا ہے
<><><><><><><><>
ہینڈ آوٹ نمبر 2 پشاور13مارچ 2017
وزیراعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے کہا ہے کہ وہ18 فروری سے قبل چار ہزار میگاواٹ بجلی سسٹم میں لے آئیں گے۔ منڈا ڈیم کی منظوری ہوچکی ہے جو 90 فیصد تک وادی پشاورکو سیلاب سے محفوظ بنا دے گا۔ انہوں نے بھاشا۔ داسو ڈیمز کیلئے زمین کا حصول اور پیہور پراجیکٹ کو چلانے کیلئے طریق کار وضع کرنے سمیت صوبہ بھر میں خوڑ کیلئے یکساں قاعدہ قانون لاگو کرنے کی ہدایت کی۔ وہ وزیراعلیٰ ہاؤس پشاور میں چیئرمین واپڈا کے ساتھ ایک اہم اجلاس کی صدارت کر رہے تھے۔ سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو، صوبائی محکموں توانائی اور ایریگیشن کے انتظامی سیکرٹریوں، کمشنر ہزارہ، ڈپٹی کمشنر اپر دیر اور دیگر متعلقہ حکام نے اجلاس میں شرکت کی۔ اجلاس میں بھاشا۔ داسو ڈیمز پر غور وخوض کیا گیا ۔جبکہ پیہور پراجیکٹ واپڈا نے یا صوبائی حکومت نے چلانے ہیں پر بھی تبادلہ خیال ہوا۔ وزیراعلیٰ نے ہدایت کی کہ اس سلسلے میں ابھی سے ذہن بنالیں اور قابل عمل طریق کار وضع کریں۔ وزیراعلیٰ نے واضح کیا کہ صوبے میں پن بجلی کے متعدد منصوبے شروع ہیں جن کی تکمیل سے مزید چار ہزار میگاواٹ بجلی سسٹم میں آجائے گی۔ چیئرمین واپڈا نے کہا کہ جو بجلی سسٹم میں شامل ہوتی جائے اسکے کلیمز/واجبات میں شامل کرتے جائیں تا کہ بعد میں مسائل پیدا نہ ہوں۔ اجلاس کو بتایا گیا کہ داسو ڈیم کیلئے سیگلو،زال اور کس میں زمین کا حصول تصفیہ طلب ہے جبکہ ڈیمز کی catchmentاور تعمیراتی کام کے لئے 969 ایکڑ اراضی موجود ہے۔ وزیراعلیٰ نے مذکورہ اراضی کے حصول کے مسئلے کا معقول حل نکالنے کی ہدایت کی تا کہ متعلقہ لوگوں کو مراعات کی فراہمی میں بھی مسئلہ نہ بنے۔ انہوں نے ہدایت کی کہ منصوبوں سے متاثرہ علاقوں کے لوگوں کی شفٹنگ کا بھی بہترین طریقہ کار ہونا چاہئے۔ واپڈا اور صوبائی ادارے آپس میں رابطہ اور تعاون یقینی بنائیں تا کہ مذاکرات کے ذریعے مسائل کا حل نکل سکے۔ اجلاس میں اتفاق ہوا کہ داسو اور بھاشا کے لئے زمین کے ریٹس اور دیگر مسائل کے حل کیلئے مکمل پیکیج ہونا چاہئے۔ وزیراعلیٰ نے چترال میں ایف ڈبلیو کی معاونت سے بجلی کے منصوبوں سے پیدا ہونے والی نئی بجلی کے پراجیکٹس کیلئے ابھی سے کام کرنے کی ضرورت پر زور دیا اور کہا کہ ان پراجیکٹس کے تناظر میں وہاں بجلی کی ترسیل اور سسٹم کو اپ گریڈ کرنے کی ضرورت ہے جس سے چیئرمین واپڈا نے اتفاق کیا اور اس سلسلے میں قابل عمل طریقہ کار نکالنے کا عندیہ دیا۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ سی پیک کے تناظر میں چشمہ لفٹ کینال سکیم بھی منظور ہوچکی ہے۔ اسکے علاوہ چین نے رشکئی میں چالیس ہزار کنال اراضی پر صنعتی بستی کی ترقی اور چین سے صنعتوں کی ریلوکیشن میں بھی دلچسپی ظاہر کی ہے۔ جبکہ منڈا ڈیم سمیت دیگر پانی کے ذخائر تعمیر کرنے سے وادی پشاور میں پینے کے پانی کی قلت پر قابو پایا جا سکے گا۔ وزیراعلیٰ نے دریائے سوات اور دریائے دیر پر بیراجز پلان کرنے کی ہدایت کی تا کہ سوات، دیر اور پورے وادی پشاور کو سیلاب کی ممکنہ تباہ کاریوں سے بچایا جا سکے۔

<><><><><><><>

13-mar13.3.2017 CM photos meeting with chairman Wapda 17th Gems mineral show1

13-mar13.3.2017 CM photos meeting with chairman Wapda 17th Gems mineral show2

13-mar13.3.2017 CM photos meeting with chairman Wapda 17th Gems mineral show3