CM KPK Talking to Chinese Investors and Journalists

Wednesday, 15 February 2017 07:12 | READ 344 TIMES Written by 
RATE THIS ITEM
(0 votes)

With the compliment of Press Secretary to Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa

Handout No.1 Peshawar 14th February 2017

Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa Pervez Khattak has offered the Chinese investors to invest in the natural advantages, the province of KP offered in Energy Sector Hydro, Gas and Solar Energy, Mining Sectors adding that New Roads connecting Pakistan with China and Central Asia, Transport and Mass Transit, Industrial Sector particularly Heavy Machine Manufacturing Plant in Rashakai, CPEC Tower in Peshawar and Agriculture and Vocational Training were some other areas which could be taken for huge investment in the backdrop of CPEC.
This he stated while talking to a delegation of SINOMAC investment Company here at Chief Minister House Peshawar. The Chinese delegation was led by Peter Tien, President Princeton Environment group China. Miss Fengying Wang, GM China SINOMAC Corporation, Minister for Industry, Mines & Mineral Aneesa Zaib Tahir Kheli, Chairman EZDMC Ghulam Dastagir and others attended.
Mr. Peter Tien introduced the Chinese company to Worthy Chief Minister and said that SINOMAC Heavy Industry Corporation is a fortune 500 companies with annual turnover of $ 40 Billion. He further stated that the company has interests in Mining, Heavy Machines Manufacturing, Highway Construction, and Power sector development Projects. He appreciated the working of KP government in Introducing the investment opportunities in KP.
Chief Minister KP appreciated the interest the companies are taking for Investment in KP. He assured them of complete and transparent collaboration. He emphasized the importance of CPEC and the wonderful opportunity that it provided for shared mutual benefit. He praised the Chinese government and said that it was doing wonders in development. He also assured the visiting delegates that KP government would provide maximum support to all investors.
<><><><><><>
Handout No.2Peshawar 14th February 2017
Chief Minister Khyber Pakhtunkhwa Pervez Khattak said the western route stands integral part of the CPEC and an additional all weather route connecting Giligit to Dir and Chakdara via Chitral and Shandoor has already been made part of the CPEC. He expects “Sky is the limit for investment in industrialization and infrastructure” in the foreseeable future. He said greater Peshawar Mass Transit would connect six districts covering transportation to 41% of the total population of the province. 1700 Mega Watt of electricity would be produced from the surplus water resources under CPEC, he added. He said that Rashakai Industrial City would be belt on 40Thousand kanals of land. He said that the province would see a mass scale industrialization and relocation of labour intensive industrial units from China. He said that the provincial government would hold a road show in Beijing towards the end of March to market the natural advantages of the province. He called upon the premier to convene the meeting of the all political forces of the province to take them on board on the western route of CPEC. He said that he succeeded considerably on the provincial rights. His government he added was about to sign an agreement with FWO for construction of two smart cities in Peshawar and Rashakai.
He was talking to the cabinet of Peshawar Press Club and Senior Journalists at a dinner in Chief Minister House Peshawar. Advisor to CM for Information Mushtaq Ahmad Ghani and Secretary Information Arshad Majeed were also present. The Chief Minister regretted that in the past corruption and corrupt practices had become the brand name of KP because of the misrule. His government made legislations and revamped the public sector entities eliminated interference that stopped corruption and led to an open and transparent governance in the province which was even taken well by the international community. The Chief Minister said that 6th JCC meeting on the CPEC had in principle taken a numbers of projects of the Khyber Pakhtunkhwa Province. The 123 Km long greater Peshawar Mass Transit connecting Peshawar, Nowshera, Mardan, Peshawar within an additional 103 Km track would further connect Swabi and Malakand, will provide efficient transportation to the 41% of the total population of the province adding that Gilgit Shandoor, Chitral, Chakdara has emerged to be the alternate route and would be all weather route of the CPEC. This will cost Rs.280 billion and would be 586 Km long. He hoped that this road will open up central Asian Republic through Wakhan in the future. The province he added had proposed additional ten hydel power projects with a capacity to produce 2157 Mega Watt of electricity.
Pervez Khattak said that this province would have eight more cements industries out of the 12 sites already identified and this would bring another 2 billion $ investment in the province. He said that his government would make some projects part of the CPEC and the rest would be marketed in the road show at Bejing towards the end of March.
Chief Minister said his government eliminated corrupt practices through legislations and discouraged political interference in the public sector institutions making them subservient to the will of the people. He said that the institutions that were given autonomy and independence, started delivering. Announcing health insurance card for the journalists, the Chief Minister said that his government would also extend this facility to the employees of the provincial government.
Talking about reforms in the health and education sectors, the Chief Minister said that 9000 recruitments of doctors and allied staff have been made through a transparent mechanism to make the health sector to deliver. Tertiary Healthcare has been made autonomous that changed the outlook of the hospitals.
Pervez Khattak said his government was clearing the mess accumulated by the misrule of the previous rulers who did politics in everything. The Police force was reformed on professional lines giving it operation and financial autonomy however there were some check and balance mechanism to make it accountable at the same time. Because of this Police has started delivering, he added.
Regarding health sector reforms Pervez Khattak said that his government provided Rs. 24 billion for the missing facilities and another Rs.17 billion to the higher secondary schools adding that his government was now planning to give autonomy to public sector colleges throughout the province.
He said the provincial government legislated making Nazra and Quran alongwith translation compulsory in the Schools throughout the province. The syllabus was reconciled with the Islamic teachings and English Medium schooling was started from Class I making the poor to compete with the rich through an even handed approach.
Under the devolution of power plan, he said that his government transferred Rs.50 billion to the local government system that would reach Rs.80 billion towards the end of next year. This was made to enable the people at the grass root level to plan their own development. He said his government established boards, authorities giving proper representation to private sector in different public sector entities to make them viable and dynamic in the service delivery. His government was also for the social services reforms adding that his government wanted to strengthen the institutions to respond effectively to public grievances.
<><><><><><>

بہ تسلیمات پریس سیکرٹری برائے وزیراعلیٰ خیبرپختونخو۱
ہینڈ آؤٹ نمبر 1 پشاور 14فروری2017
وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے چین کی حکومت اور سرمایہ کار کمپنیوں کی خیبر پختونخوا میں سرمایہ کاری کے لئے گہری دلچسپی کا خیر مقدم کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سی پیک دونوں حکومتوں کے باہمی مفادات اور مجموعی طور پر پورے خطے کے لئے انتہائی اہم منصوبہ ہے۔ سی پیک کی کامیابی کے لئے تمام دستیاب وسائل بروئے کار لائیں گے۔ان کی حکومت صوبے میں سرمایہ کاروں کو بھرپور تعاون اور شفاف ماحول کی فراہمی یقینی بنائے گی۔ وہ وزیر اعلیٰ ہاؤس پشاور میں چیئرمین خیبر پختونخوا اکنامک زون ڈویلپمنٹ اینڈ مینجمنٹ کمپنی غلام دستگیر کی سربراہی میں چین کی سرمایہ کار کمپنیوں کے نمائندہ وفد کے سا تھ اجلاس کی صدارت کر رہے تھے۔ صوبائی وزیر برائے معدنی ترقی انیسہ زیب طاہر خیلی، رکن قومی اسمبلی شہریار آفریدی، پرنسٹن انوائرنمنٹ گروپ چین کے صدر Peter Tien، جنرل منیجر چائنا سینامک (SINOMAC)کارپوریشن کے علاوہ سیف انرجی گروپ اور ازمک کے اعلیٰ حکام نے بھی اجلاس میں شرکت کی۔ اجلاس میں سی پیک کے تناظر میں خیبر پختونخوا میں جاری منصوبوں ، صوبے میں سرمایہ کاری کی استعداد اور مواقعوں پر تفصیلی تبادلہء خیال کیا گیا۔ وزیر اعلیٰ نے چینی سرمایہ کاروں کا صوبے میں سرمایہ کاری کے لئے خصوصی دلچسپی لینے پر شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے کہا کہ مختلف شعبوں میں خام مواد کی دستیابی اور قدرتی وسائل کی برتری کی وجہ سے خیبر پختونخوا میں سرمایہ کاری کے وسیع مواقع موجود ہیں۔ ان کی حکومت صوبے میں سرمایہ کاروں کے لئے پرکشش مراعات پلان کر چکی ہے۔ حکومت صوبے میں سرمایہ کاروں کو اپنے دائرہ اختیار کے مطابق بھرپور سہولتیں اور مراعات دے رہی ہے۔ تاہم سرمایہ کاروں کے ویزہ کے حصول اور ٹیکس میں استثنیٰ جیسے مسائل بھی متعلقہ حکام کے ساتھ اٹھائے جائیں گے۔ وزیر اعلیٰ نے چینی کمپنیوں کو پیشکش کی کہ صوبے کے پن بجلی ، گیس، شمسی توانائی، معدنیات، پاکستان۔چین اور وسطی ایشیاء کو باہم منسلک کرنے والی شاھراہوں ، ماس ٹرانزٹ، رشکئی صنعتی زون، سی پیک ٹاور، زراعت اور فنی تربیت کے شعبوں میں سرمایہ کاری کے فوری اور نادر مواقع موجود ہیں۔ وفد نے خیبر پختونخوا میں سرمایہ کاری کے مواقع متعارف کرنے پر صوبائی حکومت کی کاوشوں کو سراہا۔ انہوں نے صوبائی حکومت کی سرمایہ کار دوست پالیسیوں کی وجہ سے خیبر پختونخوا میں سرمایہ کاری کی شدید خواہش ظاہر کی اوریقین دلا یا کہ وہ اعلیٰ معیار کے مطابق کام کریں گے۔
َِِ<><><><><><>
ہینڈ آؤٹ نمبر 2 پشاور 14فروری 2017
وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک نے کہا ہے کہ مغربی روٹ سی پیک کا حصہ ہے جبکہ پورے خطے کو مربوط کرنے کے لئے دیر پا اور سدابہار روٹ کے طور پر گلگت، چترال، دیر تا چکدرہ روڈ بھی سی پیک کا حصہ بن چکا ہے۔صنعتکاری اور انفرسٹرکچر میں آنے والی سرمایہ کاری لوگوں کی سوچ سے بھی زیادہ ہے۔گریٹر پشاور ماس ٹرانزٹ چھ اضلاع کو لنک کرے گا۔ سی پیک کے تحت 1700میگاواٹ بجلی مقامی صنعتکاری کے لئے ترغیبی بنیاد پر فراہم ہو گی۔ رشکئی انڈسٹریل سٹی 40ہزار کنال اراضی پر مشتمل ہو گی۔ مارچ کے آخر میں بیجنگ میں روڈ شو کرنے جا رہے ہیں۔ صوبے کی قدرتی برتری کو مارکیٹ کرنے کے لئے ورکنگ گروپس کام کر رہے ہیں۔ چائنا سے ٹرکنگ اور ٹریکٹر کی صنعتوں سمیت لیبر انٹنسیو کی صنعتوں کی ری لو کیشن ہو گی۔ وزیر اعظم صوبے کے سیاسی قائدین کا جرگہ بلا کر انہیں مغربی روٹ پر اعتماد میں لیں۔ فاٹا کو صوبے کا حصہ دیکھ رہے ہیں۔صوبائی حقوق کے لئے زمینی حقائق پر مبنی عقلی دلائل کا راستہ چنا اور کافی حد تک کامیابی حاصل کی۔پشاور اور رشکئی میں سمارٹ سٹی کے قیام کے لئے ایف ڈبلیو او سے معاہدے ہونے والے ہیں۔ ماضی میں کرپشن اور بدعنوانی صوبے کا برانڈ نام بن چکا تھا۔ ہم نے لوٹ کھسوٹ اور اقرباء پروری اور اختیارات کی حوصلہ شکنی کی اور ایک شفاف حکمرانی کی داغ بیل ڈالی۔ جو دوسروں کے لئے مثال ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے پشاور پریس کلب کی کابینہ اور سینئر صحافیوں سے گذشتہ رات وزیراعلیٰ ہاؤس پشاور میں بات چیت کرتے ہوئے کیا۔وزیراعلیٰ کے مشیر برائے اطلاعات مشتاق غنی اور سیکرٹری اطلاعات ارشد مجید بھی اس موقع پر موجود تھے۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ مشترکہ تعاون کمیٹی کے چھٹے اجلاس میں خیبر پختونخوا کے مختلف منصوبوں کو سی پیک میں شامل کرنے کے لئے اصولی طور پر اتفاق کیا گیا ہے۔ ان منصوبوں میں گریٹر پشاور ماس ٹرانزٹ سسٹم بھی شامل ہے۔ جس کے تحت تقریباً 123کلومیٹر طویل ریلوے ٹریک کے ذریعے پشاور، نوشہرہ، مردان اور چارسدہ جبکہ 103کلومیٹر ٹریک کے ذریعے صوابی کو باہم منسلک کیا جائے گا۔ یہ منصوبہ 41فیصد آبادی کو کور کرے گا جو ٹرانسپورٹ کا ایک بہترین ، محفوظ اور سستا متبادل ذریعہ بھی ثابت ہو گا۔ گلگت، شندور، چترال تا چکدرہ روڈ بھی سی پیک میں شامل ہے۔ اس منصوبے کا تخمینہ لاگت 280ارب روپے ہے جو 586کلومیٹر طویل ہے۔ اس روڈ کے تین سیکشن ہیں۔ گلگت تا شندور سیکشن 224کلومیٹر طویل ہے جو مکمل طور پر گلگت بلتستان کے علاقے میں آتا ہے۔ شندور تا چترال سیکشن 146کلومیٹر طویل ہے جو خیبر پختونخوا میں آتا ہے جس کا تخمینہ لاگت 60ارب روپے ہے۔ چترال تا چکدرہ سیکشن 216کلومیٹر طویل ہے جو نیشنل ہائی وے اتھارٹی کے تحت آتا ہے۔ جے ڈبلیو جی کے سابقہ جائزہ اجلاس میں بتایا گیا کہ جنوبی کوریا کی مالی معاونت سے اس سیکشن کی بحالی و توسیع پائپ لائن میں ہے۔ گلگت شندور ، چترال تا چکدرہ روڈ سی پیک کے کوریڈور گلگت تا برھان پر لینڈسلایئڈنگ یا کسی بھی دوسری پرابلم کی صورت میں ٹریفک کے لئے بہترین متبادل روٹ ہو گا۔ یہ مستقبل میں واخان کی پٹی کے ذریعے وسطی ایشیاء اور افغانستان تک سی پیک کو مختصر ترین روٹ فراہم کرے گا۔ 1063ایکڑ رقبے پر مشتمل حطار انڈسٹریل سٹیٹ کے فیز سیون کی توسیع و ترقی پر کام جاری ہے، نئے فیز کے لئے 424ایکڑ اراضی کا اہتمام کیا جا چکا ہے۔ جبکہ مزید 1000ایکڑ اراضی مختص کی جا رہی ہے۔ اس منصوبے کا مجموعی تخمینہ لاگت تقریباً 7120ملین روپے ہے۔1000ایکڑ رقبے پر مشتمل رشکئی انڈسٹریل پارک پر بھی کام جاری ہے۔ جس کا تخمینہ لاگت تقریباً7020ملین روپے ہے۔صوبائی حکومت نے سی پیک کے لئے متبادل روٹس بھی تجویز کئے ہیں۔جن میں 135کلومیٹر طویل بشام ، خوازہ خیلہ، مینگورہ۔چکدرہ روڈ اور276کلومیٹر طویل بشام ، الپوری، بونیر ، صوابی ، مردان روڈ شامل ہیں۔اسی طرح ایک ریلوے ٹریک بھی تجویز کیا گیا ہے۔جو گلگت کو شانگلہ کے ساتھ جبکہ شندور کے ذریعے درگئی کو لنک کرے گا۔صوبائی حکومت نے 2157میگا واٹ کے حامل پن بجلی کے 10منصوبے ، تین تھرمل پراجیکٹس اور سپیشل ٹرانسمیشن لائن بھی تجویز کی ہے۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ وہ سی پیک کے تناظر میں متعدد منصوبے پلان کر چکے ہیں۔ کرک آئل ریفائنری اور ہزارہ میں سمینٹ فیکٹری قائم کر رہے ہیں۔ہم صوبے میں 7 سے 8 سمینٹ فیکٹریاں لگانے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں اس مقصد کیلئے دس سے بارہ سائٹس زیر غور ہیں۔ یہ تقریباً 2 بلین ڈالر کے پراجیکٹس ہیں۔ آئندہ جون میں کچھ منصوبوں کو سی پیک کا حصہ بنائیں گے اور باقی خود مارکیٹ کریں گے ۔ ہم نے ترقی کے راستے تلاش کرلئے ہیں۔ ہم نے کرپشن نہیں کی اور نہ اداروں میں مداخلت کی ہے۔ ہم نے لوٹ کھسوٹ ، کرپشن اور اداروں میں سیاسی مداخلت کا خاتمہ کرکے اداروں کو فعال بنایا ہے۔ اداروں کو اختیارات دے کر ڈیلیور کرنے کے قابل بنا دیا ہے ۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ صوبے کے غریب عوام کیلئے صحت انصاف کارڈ کا اجراء کیا ہے۔اس سہولت کا صحافیوں کیلئے بھی اعلان کر دیا گیا ہے جبکہ سرکاری ملازمین کیلئے بھی پلان کر رہے ہیں۔ ان کی حکومت نے ہسپتالوں میں ڈاکٹرز اور متعلقہ عملے کی کمی پوری کرنے کیلئے ساڑھے 9 ہزار سے زائد بھرتیاں کیں۔ پورے صوبے میں ڈاکٹر پورے کئے اب تبادلوں پر پابندی ہے۔ صوبے کے ہسپتالوں کو خودمختاری دینے کیلئے قانون پاس کیا۔ اب ہسپتالوں کی شکل بدل چکی ہے۔ ہم نے پچھلے 70 سال کا گند صاف کیا ہے۔ اس مقصد کیلئے اربوں روپے خرچ کئے گئے ہیں۔ حکمرانوں نے ہمیشہ پولیس کو اپنے مفادات کیلئے استعمال کیا۔ مفاد پرست حکمران اپنا اختیار کسی کو نہیں دیتے۔ ہم نے پولیس کو سیاسی مداخلت سے پاک کرکے ایک آزاد اور با اختیار ادارہ بنایا۔ چیک اینڈ بیلنس کا ایک سسٹم وضع کیا۔ اب پولیس ڈیلیور کرنے لگی ہے۔ شعبہ تعلیم میں اصلاحات کے حوالے سے وزیراعلیٰ نے کہا کہ ماضی میں اساتذہ پر بھی سیاست ہوتی رہی ۔ سکولوں میں نہ اُستاد تھا اور نہ دیگر بنیادی سہولیات تھیں۔ انکی حکومت صوبے بھر کے سکولوں میں اساتذہ پورے کئے ۔ ۔ تقریباً40 ہزار بھرتیاں عمل میں لائی گئیں ۔ صوبے کے 28000 پرائمری سکولوں میں سے 15 ہزارسکولوں میں وہ سہولیات دے چکے ہیں جوپہلے موجود نہ تھیں۔ 24 ارب روپے کی لاگت سے missing facilities پوری کر رہے ہیں جن میں سے 12 ارب ڈی ایف آئی ڈی نے دیئے ہیں۔ کالجوں کو سہولیات دینے کیلئے 17 ارب روپے خرچ کئے جارہے ہیں اور ان کو خود مختاری دینے کیلئے بھی پرعزم ہیں۔ صوبائی حکومت نے نصاب تعلیم کو اسلامی تعلیمات سے ہم آہنگ کرنے اور اسلامی اقدار کے احیاء کیلئے بھی عملی اقدامات کئے ہیں۔ پانچویں جماعت تک ناظرہ قرآن جبکہ چھٹی سے 12 ویں کلاسوں تک قرآن بمعہ ترجمہ شامل کیا گیا ہے۔امیر اور غریب کو تعلیم کے یکساں مواقع فراہم کر رہے ہیں۔ پرائمری کی سطح پر انگلش میڈیم شروع کر دیا گیا ہے تاکہ غریب کا بچہ بھی آگے جا کر امیر کا مقابلہ کرنے کے قابل ہو سکے ۔ پرویز خٹک نے کہا کہ یہ واحد صوبائی حکومت ہے جس نے حقیقی معنوں میں اختیارات مقامی حکومتوں کو منتقل کئے ہیں۔ مقامی حکومتوں کو 50 ارب روپے دے چکے ہیں۔ہماری حکومت کے اختتام تک یہ رقم 80 ارب روپے تک پہنچ جائے گی ۔ صوبائی محکموں میں بورڈز اور اتھارٹیاں بنا رہے ہیں۔ جن میں پرائیوٹ سیکٹر کو بھر پور نمائندگی دی گئی ہے۔ ہم نے اصلاحات کے ذریعے بیوروکریسی کی اجارہ داری ختم کرکے اداروں کو مضبوط بنایا ہے تاکہ عوام کے وسائل حل ہوں ۔ حقدار کو حق ملے اور کسی سے نہ انصافی نہ ہو۔
<><><><><><><>

14-feb14-2-2017 CM Photo talking to mediamen and talking to Chinese investors1

14-feb14-2-2017 CM Photo talking to mediamen and talking to Chinese investors2

14-feb14-2-2017 CM Photo talking to mediamen and talking to Chinese investors3