عائشہ گلالئی کے جھوٹ By Gharyal

Created on Friday, 04 August 2017 08:50 | 424 Views
  • Print
  • Email

Ayesha Gulla lai kay jhoot by Gharyal

عائشہ گلالئی کے جھوٹ

پریس کانفرنس میں کہا مجھے میسجز نہیں ہوئے اور خواتین کو ہوئے، کاشف عباسی کے شو میں کہا کسی اور خاتون کو نہیں جانتی جس کو میسجز ہوئے

پہلے میسج کی تاریخ یاد ہے آخری میسج کی نہیں، شاواشے

میسجز ہوئے تو کسی کو بھی نہیں بتایا سوائے والد کے، والد کو کون ایسے میسجز دکھاتا ہے؟

خیر والد بھی گلالئی جیسا غیرت مند تھا ،کہا کوئی نہیں، ہوتا ہے چلتا ہے دنیا ہے، ایم این اے کی سیٹ اینجوائیے کر، پر میسج سنبھال کر رکھ چار سال کے بعدپراپرٹی اچھے دام بکےگی!

چار سال تک خیبر پختونخواہ مدینے کی مثالی ریاست تھی، خان امیرالمومنین تھے،پرویز خٹک عادل حکمران، مگر NA1 کا ٹکٹ جب نہ ملا تو گلالئی کے خوابریزہ ریزہ ، مثالی ریاست مقبوضہ کشمیر اور مثالی رہنما چنگیز خان بن گئے. یاد رہے ٹکٹ گلالئی نے مانگا نہیں تھا لیکن بقول انکے انکا حق بنتا تھا. ٹکٹ پر تووہ ویسے بھی لعنت بھیجتی ہیں، مرحومہ بینظیر نے انکو 19سال کی عمر میں دودو دیے تھے اور محترمہ اس بچی کی ٹلینٹ کی ایسی پرستار تھی کہ پرواہ بھینہیں کی کہ 25سال سے کم عمر کا بندہ پاکستان میں اسمبلی میمبر بن بھی نہیں سکتا. اور گلالئی کے ٹیلنٹ کے سامنے عمر اور وقت کی کیا قید؟ وہ تو کاشفعباسی کے شو میں نواز شریف پہ لعنت بھیج کر صرف ایک گھنٹے بعد مبشر لقمان کے شو میں نون لیگ میں شمولیت کا عندیہ دے ڈالتی ہیں.

سوال ثبوت کا ہو تو محترمہ کہتی ہیں صحیح وقت پہ دینگی، محترمہ کی اس بونگی پہ ہمیں اس چھوکرے کا خیال آیا جو نیم جھکےشلوار اتار کر روزانہ کما رہا تھااور کمر پہ پستول باندھ رکھی تھی، کمر پہ سوار بندے نے ڈر کے پوچھا کہ اوئے ! یہ پستول کس لیے؟ چھوکرا فلسفیانہ انداز میں بولا جناب برے وقت کے لیے.کوئی پوچھے کہ اے مورکھ! اس سے برا وقت کب آئے گا کہ شلوار زمین پہ پڑی ہے اور کوئی کمر پہ سوار تیری عصمت دری کر رہا ہے اور تُو کہہ رہا ہے؟خیر چھڈو، گلالئی شاید برا وقت غیرت مند خاندان کو انٹرنیشل لیول پر زلیل کرنے کو گردانتی ہونگی،انتظار فرمائیں.

محترمہ کو ٹکٹ اور سیٹ کی کمی نہیں اور پشاور تو آزاد حیثیت سے جیت کر دکھا سکتی ہیں لیکن پی ٹی آئی کی سیٹ نہیں خالی کرنی؛ کیوں بھئ ؟ اخلاقیات کیملکہ لکھنو یہ کھلی دھاندلی کیوں کہ پارٹی چھوڑی مگر پارٹی کی سیٹ نہیں چھوڑنی؟ تو نادان لوگوں جو غیرت مند باپ ٹکٹ کے لیے بیٹی کو قوم کے سامنے کاروکاری کروا دے وہ گھٹی میں پڑی سیٹ آپ کے چند کروڑ لعنتوں کی وجہ سے ٹھکراۓ گا؟ عزت اور غیرت تو پہلے ہی بہت ہے مزید کی ضرورت ہی نہیںہے!

اب بات رہی مستقبل کی تو با پردہ با کردار اینٹی سوشل گلالئی کی خواہش ہے کہ وہ ایک ایسی پارٹی بنائیں جو صرف مستورات کی ہو اور وہ خود ان سب کےموبائیل چیک کر کر کے مردوں کے خلاف پریس کانفرنسز کا سلسلہ جاری رکھ سکیں. وژن چیک کیا آپ لوگوں نے ان کا؟ امریکہ کے نکسن زندہ ہوتے تو وہ بھیفخر کرتے ان پر،عمران یقیناً جلتا ہے اس لڑکی سے.

لیکن ناظرین اس سارے ڈرامے میں نقصان عمران خان کا نہیں، موجودہ مادر پدر آزاد سیاسی نظام میں خاص طور پر جیو جیسے نشریاتی اداروں کے ہوتے ہوئےگلالئی کا بھی یقیناً فائدہ ہی ہوگا، نقصان اس تماش بین قوم کا ہے جو ہر ہلڑ بازی پہ ہمہ تن گوش جمع ہوجاتے ہیں اور دنوں مہینوں تک داد دیتے رہتےہیں. نہ حالکی خبر، نہ ماضی کا علم اور نہ مستقبل کی فکر؛ جیو اور حکمرانوں نے جس رونے دھونے پہ لگا دیا، ہم لگ گئے، یہ کبھی نہ سوچا کہ یہ ماجرا دکھا کر آخرکونسا ماجرا چھپایا جا رہا یے؟